Nohay 2020

Latest Lyrics

MANQABAT



یاعلی ع یا علی ع یاعلی ع یا مرتضی شیر خدا ع ہے میرا مولا ع میرا مشکل کشاء جو کہے یا علی ع کیا ہے اس کے ایمان کی سند کیا ہے 1۔ خود پڑھی مصطفے ص نے ناد علی ع پھر بھی کہتا ہے مستند کیا ہے۔ 2۔ ہے خدا ج کا بھی ایک نام علی ع اے مقصر اب اس کی رد کیا ہے۔ 3۔ ہم بڑھا دیتے ہیں اگر حد سے تم بتادو علی ع کی حد کیا ہے۔ 4۔ ہے عطائے حسین ع میرا ہنر پھر بھی مجھ سے تجھے حسد کیا ہے 5۔ ساتھ جب ہے چراغ حب علی ع خوف تاریکی لحد کیا ہے 6۔اپنی چادر میں پاوں رکھتا ہوں جانتا ہوں کے میرا قد کیا ہے 7۔ دیکھو حر ع اور حرملا کا چلن جان لو نیک کیا ہے بد کیا ہے 8۔ پوچھو انصار شہ ع پوچھو سہیل موت کیا چیز ہے شہد کیا ہے



تین شعبان کا دن شروع ھوگیا آفتابِ شہادت طلوع ھوگیا مسکرانے لگے دوجہاں کے مکیں کون آغوشِ زہراؑ میں ھے یہ حَسیں جب نگاہیں ملیں نور سے نور کی خوش ہوئیں بول اُٹھیں سیدہؑ آج میرا حُسینؑ آگیا فاطمہؑ نے کہا میرے نورِ نظر بن تمہارے ادھورا ادھورا تھا گھر کبریا کی قسم تم نا آتے اگر تم سے ملنے میں آجاتی خود عرش پر رب سے مانگوں اب اور کیا آج میرا حُسینؑ آگیا عرش والے بھی موجود ہیں صف بہ صف مسکراکر پکارے یہ شاہِ نجف ایسا بیٹا ملا ھے یہ میرا شرف اور پھر دیکھکر فاطمہؑ کی طرف مرتضٰیؑ نے کہا شکریہ آج میرا حُسینؑ آگیا فاطمہؑ پھر حسنؑ سے یہ کہنے لگیں چھوٹا مبارک ھو اے ھم نشیں جسکا تھا انتظار آگیا وہ حَسیں آج میری خوشی کا ٹھکانا نہیں دل میرا دے رھا ھے صدا آج میرا حُسینؑ آگیا رُخ محمدؑ نے دیکھا تو رُخ کھِل گیا مسکراکر کہا آج سب مل گیا آج سینے میں اِسکے میرا دِل گیا اے میرے دین اب وقتِ مشکل گیا ملگیا تجھکو مشکل کشا آج میرا حُسینؑ آگیا دوجہاں کے مسیحہ کا رخ دیکھکے اپنے فطرس سے جبرئیل جاکر ملے مسکراکر یہ جبرئیل کہنے لگے تیری پرواز کے پھر سے دن آگئے تجھکو ھوجائینگے پر عطا آج میرا حُسینؑ آگیا کربلا کی زمیں بول اُٹھی جھوم کے منتظر تھی میں مشکل کشا کیلئے آئے کتنے نبیؐ آکے جاتے رھے کرب سے مجھکو آزاد نا کرسکے انتظار اب مکمل ھوا آج میرا حُسینؑ آگیا فرش پر ھے نزول آج قرآن کا عیدِ اکبرؑ دن تین شعبان کا مرتبہ بڑھ گیا اور انسان کا دیکھوچہرا منورھےذیشان کا جشن کیوں نا منائے رضا آج میرا حُسینؑ آگیا


خواہر حسین بنت مرتضی کیا بتاوں میں زینب کی کیا شان ہے۔ کل ایماں کے ایمان کا مان ہے۔ ۔ وہ محمد جو ہیں خاتم النبیا جس کو کہتی ہے دنیا حبیب خدا جس کا داماد ہے ضیغم کبریا جس کی بیٹی ہے خیرالنسا فاطمہ اس محمد ص کے دل کا یہ ارمان ہے۔۔ ۔ کیا بتاوں میں زینب۔۔ ۔ یے شجاعت کی ملکہ اسی کا لقب اس کے قدموں میں ہے سر زمین عرب کربلا بھی ہے زندہ اسی کے سبب اس کی مدحت کرے خود محمد کا رب عقل اس کے فصائل پہ حیران ہے۔ کیا بتاوں۔۔۔۔۔۔ ۔ خوبیاں جس قدر ہیں سبھی خوب ہیں رعب ایسا کے کونین مرعوب ہے سامنے اس کے غالب بھی مغلوب ہے آیتیں اس کی صورت سے منسوب ہے جس کو قرآن پڑھے یہ وہ قرآن ہے۔ ۔ یہ نہ ہوتی تو مرجاتا اسلام بھی۔ مٹ گیا ہوتا خالق کا پیغام بھی کھاگئ ہوتی صبح کو پھر شام بھی کوئی لیتا نہ اللہ کا نام بھی دین ہے یہ بھی زینب کا احسان ہے۔۔ ۔ کربلا ہے ندا اور منادی ہے یہ دو اماموں کی اک ساتھ ہادی ہے یہ راج کرنے کی بچپن سے عادی ہے یہ دو جہاں کی بڑی شاہ زادی ہے یہ بادشاہ وفا جس کا دربان ہے۔۔ ۔ اس خطبے خطابت کے سردار ہیں اس کے نانا شریعت کے سردار ہیں باپ اور ماں شرافت کے سردار ہیں۔ دو بڑے بھائی جنت کے سردار ہیں۔ چھوٹا بھائی وفاوں کا سلطان ہے۔۔ ۔ بے عبا ہے یہ ہی فخر آل عبا بے ردائی ہے اس کی وفا کی ردا اس کا ممنون ہے دو جہاں کا خدا اس کے بارے میں کہتی ہے خود کربلا محسن دین پر تیرا احسان ہے۔۔ ۔ کوئی عظمت میں ان سے زیادہ نہیں ان کے گھر سے بھی گھر کوئی اعلی نہیں ان کا نوکر ہوں میں کوئی مجھ سا نہیں خلد کی کوئی گوہر کو پرواہ نہیں خلد تو قصر زینب کا دالان ہے۔۔ کیا بتاوں میں زینب ۔۔۔۔۔۔۔



سکینہؑ فجرِ امامت کا وہ ستارا ھے حُسینؑ آپکی خاطر جسے اُتارا ھے اگر یہ نا ہوں تو تاروں میں روشنی نا رھے اِسی کے نور سے روشن جہان سارا ھے نمازِ شب میں سکینہؑ کو مانگتے ہیں حُسینؑ یہ جانماز پہ کتنا حَسیں نظارا ھے یہ جب تلک نا ہو سینے پہ نیند آتی نہیں کہاں حُسینؑ کا اسکے بنا گزارا ھے دیا جو واسطہ اسکا تو آگئے عباسؑ چچا بھتیجی کا رشتہ بھی کتنا پیارا ھے ھے مثلِ فاطمہؑ مشکل کشا امامت کی مدد کے واسطے سجادؑ نے پکارا ھے سکینہؑ بن کے چلی آئیں فاطمہؑ پھر سے بنا حُسینؑ کے رہنا کہاں گوارا ھے یہ معجزہ بھی کئی شب ربابؑ نے دیکھا وہیں ھے چاند جہاں آپکا اشارا ھے ہو شاہ ذادیؑ یہ ذیشان اور رضا پہ کرم بلالیں روضے پہ ارمان یہ ھمارا ھے



Ek Waris e Haider hai Jo ghaib say aayega Is duar ki marhab ki aukat bataega Shabbir ki ek majlis kaab e may bapa hogi Allah ke Ghar Mai bhi ye rasm Ada hogi Khud farshe aza apne hathon say bichaega Kaabe say alam lekar ishaan say niklega Qura'an imamat ka juzdan say niklega Tohid ke jalwo Mai Islam nahaega Islam ke phoolo ki parcham Mai ladi hogi Ek mashk phairere ke siney pa padi hogi Pyaso ki shahadat ka ye qarz chukaega Aajane do ghaibat say Waris ko shahedo ke Od jaengy duniya Mai khud hosh yazeedo ke Jub hath Mai Haider ki talwar othaega Her Dil Mai ziyarat ke Arman Badey hongy Isa bhi jamaAt ke khahish Mai khadey hongy Jub apna musalla ye Pani pa bichaega Her ek buari say Dil saaf karega ye Khalik ki adalat Mai insaf karega ye Hai baaghe fidak kiska duniya ko bataega Jo door hai unko bhi nazdeek bulalega Haider ke mohibbo ko seene say laga lega Munkir ko wilayat ke ye mooh na laegaga kirdar ke jalwo ka Bazar alag hoga Mehdi ki hukumat ka meyar alag hoga Haq Charo taraf hoga batil mitjaega Zalim ke lie Akhtar duniya Mai tabahi hai Sub ahle aza Akbar Mola ke sipahi hai Munkir hai Jo iska vo Jannat Mai na jaega



14 Sharaab khano ki yakja mila ke laa Aye umr e jaodaan mera saagar utha ke laa Jam e wila mai zehr e adadat na ghool dein Is maye ko dushmano ki nazar se bacha ke laa Peena hai maye ghadeer ki kaabe mai beth ker Jo hajiyon mai rind hain inko bula ke la Le chal najaf ko raksh e muqadar kisi tarah Ik martaba mujhe meri jannat dikha ke laa Hai Jo Ali Ali ke tarane pe mahtaraz Unko Dil e rasool ki dharkan suna ke laa Gar ho Ali ki nend ki meraj dekhna Hijrat ki shab ki ankh se kajal chura ke laa Ae jibrail aye hain balein pe bu turab Jaa jald jake arsh se kursi utha ke laa Wais ko jam e midhat e haider pila saroosh Le jaa is admi ko bhi insan bana ke laa
Ap par durood aur salam ayw mere imam as Bas yahi sada hai subh o shaam aye mere imam as Arahy hain ap chal rhi hai ye khabar Khana e khuda pay hai tiki hui nazar Saj rahy hain rastay tamam Har nafas tujhay mera salam arz hai Mei tou kia hun har nabi wali py farz hai Dou jahan mei tera ehteraam Dou jahan ki badshah teri zaat hai Tu hai uska hath jou khuda ka hath hai Teray hath bayaetein tamam Is liye tumhara intezar hai shadeed Sar uthaye phir rahy hain waqt kay yazeed Aa kay un sy lijiye inteqam khana e khuda ko qaid sy churaiye Mola jald aiye ab aa bhi jaiye Le kay zulfiqar be nayaam Mangty hain aur yun zahoor ki dua Dekhna hai hum ko inteqam e karbala Chahy phr hou zindagi tamam choomtay hain paon akay taray apkay Chal rha hai dekh kay isharay apkay Sari kainaat ka nizaam wasf sab haseen hassan kay naam hogye Takht o taaj mir kay ghulam hogye Jab sy wou hua tera ghulam


Ya Mahdi Madadi, Ya Mehdi Madadi…
Al Ajal Al Ajal Al Ajal…
Diye Zulm Ke Kab Bujhaoge Maula
Hawa e Karam Kab Chalaoge Maula
Kab Apni Ziyarat Karaoge Maula
Ye Ghaybat Kahan Tak Barhaaoge Maula
Judai Mai Kab Tak Rulaaoge Mola, Kab Aaoge Mola Kab Aaoge Mola
Kab Apni Ziyarat Karaoge Mola, Kab Aaoge Mola Kab Aaoge Mola Hui Ek Muddat Sitam Sehte Sehte
Hamay Kab Ghamon Se Churdhaoge Mola…Kab Aaoge Mola
Zabaan Thak Chuki Al Ajal Kehte Kehte Areezon Ko Kab Tak Waseela Banayen Tumhe Haal e Dil Saamne Ab Sunayen
Kab Aapas Main Inko Milaaoge Mola… Kab Aaoge Mola
Kab In Faaslon Ko Mitaaoge Mola… Kab Aaoge Maula Wilayat Ko Zakhmi Kiye Jaarahe Hain Sab Ek Doosre Se Laray Jaa Rahe Hain Zahoor Aap Ka Hoga Kis Roz Jaane
Galay Se Hamay Kab Lagaao Ge Mola… Kab Aaoge Mola
Dua e Faraj Hai Labon Par Hamare Asar Kab Duaon Mai Laaoge Mola… Kab Aaogay Mola Ye Dil Misle Hur Hai Pareeshaan Hamara Hussain Aap Ban Kar Batao Khudara
Dil e Fatima Ko Sukoon Kab Milega
Hai Halat Bhi Ab Misle Yaqoob Dekho Hamari Umeedon Ke Yusuf Tumhi Ho Taras Kab In Aankhon Pe Khaaoge Mola… Kab Aaoge Mola Baqayya Mai Kab Tak Andhera Rahega
Hilal aur Mesum Bahate Hain Ansoo
Diya Qabr Pe Kab Jalaaoge Mola… Kab Aaoge Mola Rahenge Yunhi Kab Talak Ashk Jaari Shab e Hijr Kab Khatm Hogi Hamari Chiraaghe Sahar Kab Jalaaoge Mola… Kab Aaoge Mola
Kya Ghaibat Se Ab Bhi Na Aaoge Mola… Kab Aaoge Mola
Sajay Hain Janazon Ke Bazaar Har Su


Mai Suye Karbala Jaa Raha Tha Parhta Salle Ala Chalte Chalte Peeraha Tha Mawadat Ke Saaghar, Araha Tha Maza... Chalte Chalte... Shahe Karbobala Ki Ziyarat Karne Nikla Tha Mai Apne Gharse Jo Qaza Hogayeen Theen Namaze, Hogayeen Vo Ada... Chalte Chalte... Kuch Qadam Hur Barha Sheh Ki Jaanib, Kuch Qadam Sheh Barhe Hur Ki Jaanib Bakhshdi Chand Lamhon Mai Sheh Ne, Hur Ki Saari Khata... Chalte Chalte... Bughz e Haider The Seene May Jiske, Vo Tawaf e Haram Kar Raha Tha Aayi Taqdeer Chakkar Mai Aisi, Seedha Dozakh Gaya... Chalte Chalte... Shahe Konain Zainab Ke Bhai, Tumne Tauheed Aise Bachayi Dhoondne Nikla Jo Bhi Khuda Ko, Agaya Karbala... Chalte Chalte... Ae Yazeed Ab Tujhe Qaid Karne, Tauq o Zanjeer Bairi Uthaye Dekh Shair e Ilahi Ka Beta, Shaam Tak Agaya... Chalte Chalte... Horahi Thi Dhamak Is Bala Ki, Ruk Gayeen Saansain Ahle Jafa Ki Karke Dhak Dhak Vilayi Ke Dil Ne, Aisa Matam Kiya... Chalte Chalte... Fakhr Se Bolay Gohar Se Mesum, Har Ghari Har Nafas Dam Hamadam Jhoom Utheygi Saari Khudayi, Vo Karainge Sana... Chalte Chalte...



یا مہدی ، مہدی یامہدی یا مہدی ، مہدی یامہدی ادرکنی یامہدی ادرکنی یامہدی اک مفتی مجھے دوستوں کل رات ملا تھا مہدی کا مخالف تھا یہ چہرے پہ لکھا تھا ایماں پہ میرے ضرب لگانے پہ تُلا تھا میں اُس کے ارادہ پہ بہت دل میں ہنسا تھا کہتا تھا یہ غیبت مجھے افسانہ لگے ہے میں نے بھی کہا تو مجھے دیوانہ لگے ہے ہر چیز نظر آئے ضروری نہیں مفتی جنت بھی نہیں دیکھی ہے ایمان ہے پھر بھی اصحابِ کہف پر بھی تجھے شک نہیں کوئی پھر کیوں نہ ذہانت بھی ہنسے عقل پہ تیری تو جسکو گماں مان رہا ہے وہ یقیں ہے شیطان کا قائیل تو ہے مہدی کا نہیں ہے یہ سنتے ہی مرنے لگا وہ بغض کا مارا بعض آیا نہیں پھر بھی وہ شعطان کا پیارا اک بار کیا پھر اسے زلت نے اشارہ اور ہاتھ رکھے دل پہ وہ چلایا بچارا اس وقت بتا مجھکو تیرا مہدی کہاں ہے میں نے کہا اللہ جہاں ہے وہ وہاں ہے وہ کان پکڑ کر یہ پکارا ارے توبہ مہدی کو تو اللہ کے جیسا ہے سمجھتا میں نے کہا پڑھ لکھ کے بھی جاہل ہی رہے نا اللہ نہیں ہیں ولی اللہ ہیں مولا وہ پردے میں رہ کر یہ سکھاتے ہیں خدا ہے مہدی ہی زمانے کو بتاتے ہیں خدا ہے اللہ کے بدن کا نہیں قائل مرا فرقہ ظاہر میں نہ ہاتھ اُس کے نہ آنکھیں ہیں نہ چہرہ لیکن یہ خدائی جو چلانی تھی اے مُلّا کام اُس نے یہ کچھ ہاتھوں کو کچھ آنکھوں کو سونپا اللہ کے نائب بھی سجاتے ہیں خدائی خالق کی مدد سے وہ چلاتے ہیں خدائی کہنے لگا اچھا۰۰۰۰۰۰یہ ہے اصل میں چکر میں نے کہا چکرانے لگے شیخ جی سُن کر کہنے لگا یہ عقل سے منطق سے ہے باہر گیارہ سو برس سے ہو کوئی زندہ زمیں پر میں نے کہا کیوں عقل میں تیری نہیں آتے عیسی تو سمجھ آتے ہیں مہدی نہیں آتے؟؟ وہ بولا اب اتنا بھی غلو ٹھیک نہیں ہے عیسی تو نبی ہیں یہ گُرو ٹھیک نہیں ہے مہدی ہیں علی پر یہ عُلو نہیں ٹھیک ہے میں نے کہا میں ٹھیک ہوں توُ ٹھیک نہیں ہے عیسی کو جو مہدی سے بڑھاؤں تو غلو ہے وہ صرف پسینہ یہ محمد کا لہو ہے تاثیرِ لہو سن کے ہوئے لال وہ حضرت کہنے لگے یہ ہاتھ میں کیا ہے ترے بدعت میں نے کہا بدعت نہیں تحریرِ محبت نام اس کا عریضہ یہ ہے پروانہِ قسمت وہ بولا کہ حد ہوگئی ایسا بھی کہیں ہے کیوں لکھتے ہو جب خط یہ پہنچتا ہی نہیں ہے اک لمحے کو خاموش ہوا میں بھی یہ سُن کر وہ سمجھا کہ لو پھنس گیا آخر میں یہ کافر میں نے کہا دل میں کہ مدد حیدرِ صفدر جاری یہ تکلم ہوا پھر میرے لبوں پر جس طرح پہنچتی ہے دعا ربِ عُلا تک جاتا ہے عریضہ بھی یونہی دستِ خدا تک


عرش سے فرش پہ ھر رخ سے کمال آتا ھے گھر میں شبیرؑ کے شبیرؑ کا لال آتا ھے فرش پر بن کے محمدؐ کی مثال آتا ھے اِسکی خلقت کا جو سوچوں تو خیال آتا ھے سامنے پہلے محمدؐ کو بٹھایا ھوگا پھر خدا نے علیؑ اکبرؑ کو بنایا ھوگا حُکم خالق ھے کے ہونا ھے نزولِ اکبرؑ حُسن ہی حُسن نظر آئے جدھر جائے نظر سج گئے دونوں جہاں کتنا حَسین ھے منظر بچھ گیا فرش پہ جب عرشِ بریں تب جاکر اُمِ لیلٰیؑ کی تمناؤں کا محور اترا نور کے سائے میں شبیرؑ کا اکبرؑ اترا باپ سے بیٹے کی جب پہلی ملاقات ہوئی آنکھوں آنکھوں میں حَسینوں ک ی حَسیں بات ہوئی نورِ اکبرؑ کے اُجالوں میں بسر رات ہوئی دیکھا شبیرؑ نے چہرہ تو ادا نعت ہوئی جیسا چاھا تھا ملا ھے مجھے بیٹا ویسا میرا بیٹا تو نظر آتا ھے نانا جیسا پائی جب آمدِ اکبرؑ کی خبر زینبؑ نے مسکراتے ہوئے کی راہ بسر زینبؑ نے شمس کی گود میں دیکھا جو قمر زینبؑ نے خود ستاروں سے اُتاری ھے نظر زینبؑ نے بھائی سے بولی بہن نیک سمجھ کر دیدو میری آغوش میں بھیا میرا اکبرؑ دیدو لیکے آغوش میں زینبؑ نے کہا کیا کہنے تیرا چہرا تیری ھر ایک ادا کیا کہنے تیری آنکھوں میں نظر آئے خدا کیا کہنے خود یہ قرآن بھی دیتا ھے صدا کیا کہنے جب سے گھر آیا ھے تو حُسن مثالی بن کر چاند دلہیز پہ بیٹھا سوالی بن کر دیکھا عباسؑ نے چہرا جو علی اکبرؑ کا بولے اک اور سپاہی میرے لشکر کو ملا رعب آنکھوں میں نظر آیا جو اپنے جیسا کمسنی میں یہ چلن دیکھکے غازیؑ نے کہا کیسے تلوار چلاتے ہیں سکھاؤنگا اِسے دیکھنا ثانیِ عباسؑ بناؤنگا اِسے کہا شبیر ع نے سجاد سے آو دیکھو علیؑ اکبر کی نظر ڈھونڈ رہی ھے تمکو چھوٹے بھائی کے قریب آیا بڑا بھائی جو مسکراتے ھوئے اکبرؑ سے کہا کیسے ھو ھے قسم حُسن کی تو اتنا حَسیں ھے اکبرؑ تیرے چہرے سے نظر ھٹتی نہیں ھے اکبرؑ دیکھو ذیشان و رضا کیسا شباب آیا ھے نوجوانی کے گلستاں میں گلاب آیا ھے اسلئے چہرہِ اکبرؑ پہ نقاب آیا ھے کوئی نا کہدے محمدؐ کا جواب آیا ھے ساتھ شبیرؑ کے اکبرؑ جو کہیں جاتے ہیں اسکے دیدار کو یوسفؑ بھی چلے آتے ہیں